Home / اہم خبریں / مسلم لیگ ن کی خفیہ میٹنگز میں جاسوس سگھس گیے

مسلم لیگ ن کی خفیہ میٹنگز میں جاسوس سگھس گیے

:پاکستان مسلم لیگ ن میں ایک جاسوس رہنما کا انکشافل :پاکستان مسلم لیگ ن میں ایک جاسوس رہنما کا انکشاف ہوا ہے جو پارٹی کی معلومات آگے پہنچاتا ہے۔قومی اخبار میں شائع ایک کے مطابق پاکستان مسلم لیگ ن میں مشتبہ مخبر پارٹی کی اعلیٰ قیادت کی نظر ہے کیونکہ اس بات کی نشاندہی ہوئی تھی کہ قریبی حلقوں میں ہونے والی بات چیت، سرگوشیاں براہ راست ایسے افراد تک پہنچ رہی ہیں جو موجود ہ بحرانی وقتوں میں پارٹی کی سیاست پر نظر رکھے ہوئے ہیں۔

جس شخص پر سوالات اٹھ رہے ہیں وہ نواز شریف،شہباز شریف اور مریم نواز کا قریبی شخص ہے۔اور اکثر انہیں پارٹی کے اندر اور باہر پیغام رسانی کا پیغام دیا جاتا ہے۔یہ شک اس وقت اٹھا جب ائیر پوڈز کا حد سے زیادہ اور غیر ضروری استعمال ہونے لگا،ائیر پوڈز ٹیکنالوجی کمپنی ایپل کی اجب سے بنائے جانے والے بلیو ٹوتھ وائر لیس ہیڈفونز ہیں۔
اس شخص کے ائیرپوڈز میں جاسوس ڈائیوائس نصب ہیں اور وہ مشتبہ شخص میٹنگ میں یا پھر کہیں اور جانے کی صورت میں اہم رہنماؤں کے قریب اپنے ائیر ائیرپورڈ بھول جاتا ہے۔

یہ سازش اس وقت معلوم ہوئی جب بند کمروں میں انتہائی خفیہ بات چیت فورا غیر مطلوبہ عناصر تک پہنچ گئی۔ائیر پوڈز عموما فون سننے کے لیے اس وقت استعمال کیے جاتے ہیں جب آپ کا آئی فون آپ سے دور رکھا یو یا پھر آپ اپنا فون ہاتھ میں پکڑا نہیں چاہتےلیکن ائیرپوڈز اور فون کا ایک دوسرے سے 5 سے 6میٹر کے دائرے میں ہونا ضروری ہے۔اس معاملے میں جس شخص پر شک ہے اس کے پاس اکثر اوقات فون نہیں ہوتا اور امکان ہے کہ وہ یہ فون باہر ہی اپنی گاڑی میں رکھ دیتا ہو۔
اور یہ ائیر پوڈز کی رینج میں آتے ہوں جہاں سے یہ سگنل پکڑتے ہوں۔اس لیے بھی شک ہوا کیونکہ کمروں میں ہونے والی میٹنگز میں مذکورہ شخص نے ائیر پوڈز پہننا معمول بنا لیا۔ائیرپوڈز میں جاسوس چپ نصب کی جائے تو ا س سے سرگوشیاں بھی سنی جا سکتی ہئں۔کچھ پارٹی رہنماؤں کے لیے مذکورہ شخص کی جانب سے جاسوسی کرنا حیران کن بات نہیں ہے کیونکہ انہیں اس شخص کے پارٹی قیادت کے مخالف بنے ہوئے عناصر کے ساتھ تعلقات کا پس منظر معلوم ہے۔پارٹی کی ایک بااثر شخصیت کا کہنا ہے کہ مشکوک شخص پر کڑی نظر رکھی جا رہی ہے۔اس شخص کے محابسے کے لیے پارٹی قیادت مختلف شواہد پر غور کر رہی ہے۔
اس شخص کے ائیرپوڈز میں جاسوس ڈائیوائس نصب ہیں اور وہ مشتبہ شخص میٹنگ میں یا پھر کہیں اور جانے کی صورت میں اہم رہنماؤں کے قریب اپنے ائیر ائیرپورڈ بھول جاتا ہے۔

یہ سازش اس وقت معلوم ہوئی جب بند کمروں میں انتہائی خفیہ بات چیت فورا غیر مطلوبہ عناصر تک پہنچ گئی۔ائیر پوڈز عموما فون سننے کے لیے اس وقت استعمال کیے جاتے ہیں جب آپ کا آئی فون آپ سے دور رکھا یو یا پھر آپ اپنا فون ہاتھ میں پکڑا نہیں چاہتےلیکن ائیرپوڈز اور فون کا ایک دوسرے سے 5 سے 6میٹر کے دائرے میں ہونا ضروری ہے۔اس معاملے میں جس شخص پر شک ہے اس کے پاس اکثر اوقات فون نہیں ہوتا اور امکان ہے کہ وہ یہ فون باہر ہی اپنی گاڑی میں رکھ دیتا ہو۔
اور یہ ائیر پوڈز کی رینج میں آتے ہوں جہاں سے یہ سگنل پکڑتے ہوں۔اس لیے بھی شک ہوا کیونکہ کمروں میں ہونے والی میٹنگز میں مذکورہ شخص نے ائیر پوڈز پہننا معمول بنا لیا۔ائیرپوڈز میں جاسوس چپ نصب کی جائے تو ا س سے سرگوشیاں بھی سنی جا سکتی ہئں۔کچھ پارٹی رہنماؤں کے لیے مذکورہ شخص کی جانب سے جاسوسی کرنا حیران کن بات نہیں ہے کیونکہ انہیں اس شخص کے پارٹی قیادت کے مخالف بنے ہوئے عناصر کے ساتھ تعلقات کا پس منظر معلوم ہے۔پارٹی کی ایک بااثر شخصیت کا کہنا ہے کہ مشکوک شخص پر کڑی نظر رکھی جا رہی ہے۔اس شخص کے محابسے کے لیے پارٹی قیادت مختلف شواہد پر غور کر رہی ہے۔

About admin

Check Also

: جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن کے آزادی مارچ میں افغان طالبان کے جھنڈے لانے والے کارکنان کو گرفتار کر لیا گیا ہے

اسلام آباد کلک رپورٹر سے جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن کے …

Leave a Reply

کلک نیوز سے واٹس ایپ پر رابطہ کریں