Home / ہمارا شہر / اسلام آباد / وزیر اعظم کی درخواست کے باوجودٹیکس ایمنسٹی اسکیم مطلوبہ نتائج سے محروم

وزیر اعظم کی درخواست کے باوجودٹیکس ایمنسٹی اسکیم مطلوبہ نتائج سے محروم

اسلا م آباد( شہروز سے)وزیر اعظم کی درخواست کے باوجودٹیکس ایمنسٹی اسکیم خاطر خواہ نتائج سے محروم ہے۔ذرائع کا کہنا ہے کہ ایف بی آر کو 1272 ڈکلیئریشنز موصول‘ تقریباً 93کروڑ60لاکھ روپے ٹیکس ملے گا۔تفصیلات کے مطابق،وزیر اعظم عمران خان کی خصوصی پیغام کے ذریعے درخواست کے باوجود کہ لوگ ٹیکس ایمنسٹی اسکیم سے فائدہ اٹھائیں۔اب تک ایف بی آر کو کو ئی خاص ردعمل نہیں ملا ہے کیوں کہ ایف بی آر کو 1272ڈکلیئریشنز موصول ہوئی ہیں ۔جس کے ذریعے تقریباً 93کروڑ60 لاکھ روپے کی رقم ٹیکس کی صورت میںموصول ہوگی۔اعلیٰ عہدیدار نے دی نیوز کو تصدیق کی ہے کہ ہمیں 1272 ڈکلیئریشنز موصول ہوچکی ہیں جس میں سے 66فیصد نے مقامی اثاثوں/آمدنی پر ایمنسٹی لی ہے ۔جب کہ ایک تہائی نے بیرون ممالک اثاثوں/آمدنی پر ایمنسٹی حاصل کی ہے۔عہدیدا رکا کہنا تھا کہ جمع کرائے گئے اثاثوں کے ڈکلیئریشنز فارم سے ظاہر ہوتا ہے کہ ایف بی آر کو ٹیکس کی صورت میں 93کروڑ 60لاکھ روپے ملیں گے۔ان کا کہنا تھا کہ گزشتہ ایمنسٹی اسکیم کے ذریعےدس سال میں90ارب روپے ٹیکس کی صور ت میں حاصل کیے گئے تھے لہٰذا اس مرتبہ ایمنسٹی اسکیم کوجون 2019کے آخری وسط میںاچھا ردعمل ملے گا۔اثاثے ظاہر کرنے کی اسکیم کے تحت پاکستان سے باہر اثاثے ہونے اور غیر ملکی کرنسی ملک میں ہونے پر اسے شرح مبادلہ کے تحت روپے میں تبدیل کرانا ہوگا۔جیسا کہ اسٹیٹ بینک اور ایف بی آر دس کرنسیوں کے حوالے سے ای میل کے ذریعے روزمرہ بنیاد پر بتا رہا ہے۔جیسا کہ اماراتی درہم، آسٹریلوی ڈالر، کینیڈین ڈالر، سوئس فرانک ، یوان، یورو، برطانوی پائونڈ، جاپانی یین، سعودی ریال اور امریکی ڈالرشامل ہیں۔سسٹم ٹیکس دہندہ کی ٹیکس ذمہ داری کو پاکستانی روپے میں بنائے گا ، جو کہ متعلقہ ٹیکس شرح کے اطلاق کے ذریعے ہوگی اور جو ظاہر کیے گئے اثاثے کی ہر کٹیگری کے مطابق ہوگی۔ٹیکس ادا کرنے والے کی مرضی ہوگی کہ وہ امریکی ڈالر یا اماراتی درہم میں اپنا ٹیکس ادا کرے۔ٹیکس ادائیگی کی کرنسی کے تعین کے بعد سسٹم واجب الادا ٹیکس کو روپے اور امریکی ڈالر/اماراتی درہم میں تعین کرے گا۔پی ایس آئی ڈی کا ترتیب وار نمبر ٹیکس ادا کرنے والا اپنے ریکارڈ میں رکھ لے گا، جب کہ اس کے علاوہ اس کا پرنٹ بھی لے گا۔ایسے اثاثے جن میں پاکستان میں رکھی گئی غیر ملکی کرنسی بھی شامل ہے۔اس میں اثاثے ظاہر کرنے والے کے پاس موجود نقدی ، جو کہ بینک اکائونٹ میں جمع کی گئی ہو، غیر ملکی کرنسی جو کہ ظاہر کرنے والے کے اپنے غیر ملکی کرنسی بینک اکائونٹ میں ہواور اس نے مذکورہ اکائونٹ میں رکھی ہو اور پاکستان بنائو سرٹیفکیٹس(پی بی سی)میں لگائی گئی رقم کی قدر عرفی شامل ہے۔

About clicknewslive

Check Also

: جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن کے آزادی مارچ میں افغان طالبان کے جھنڈے لانے والے کارکنان کو گرفتار کر لیا گیا ہے

اسلام آباد کلک رپورٹر سے جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن کے …

Leave a Reply

کلک نیوز سے واٹس ایپ پر رابطہ کریں