Home / اہم خبریں / میثاق معیشت کا وقت ختم ، حکومت ساتھ بیٹھنے کی اہل نہیں ، محمد زبیر

میثاق معیشت کا وقت ختم ، حکومت ساتھ بیٹھنے کی اہل نہیں ، محمد زبیر

کراچی (ٹی وی رپورٹ)ن لیگ کے رہنما محمد زبیرعمرنے کہا ہے کہ میثاق معیشت کرنے کا وقت اب ختم ہوچکا ہے، ریاست مدینہ میں صرف سود تیزی سے بڑھ رہا ہے، حکومت میں اتنی اہلیت ہی نہیں ہے کہ ن لیگ ان کے ساتھ بیٹھے، حکومت کے ساتھ بیٹھنے پر اپوزیشن کو بھی فرینڈلی ہونے کا الزام لگے گا،ن لیگ پبلک سیکٹر اداروں کی نجکاری کی مخالفت نہیں کرے گی، ہمارا اختلاف اس بات پر ہے کہ دونوں طرف آئی ایم ایف کی ٹیم بیٹھی ہے، حکومت نیب کے ساتھ بیٹھ کر ہماری قیادت کیخلاف جھوٹے مقدمات بنائے گی تو ہم ان کے ساتھ تعاون نہیں کریں گے،وزیراعظم عمران خان پارلیمنٹ آتے نہیں ہم کس کے ساتھ بیٹھیں۔وہ جیو کے پروگرام ”کیپٹل ٹاک“ میں میزبان حامد میر سے گفتگو کررہے تھے۔ پروگرام میں تحریک انصاف کے رہنما ہمایوں اخترخان اور ایگزیکٹو ڈائریکٹر ایس ڈی پی آئی عابد سلہری بھی شریک تھے۔ہمایوں اختر خان نے کہا کہ آئی ایم ایف سے موجودہ ڈیل اور ماضی کے ڈیل کے نتائج میں کوئی فرق نہیں ہے، اپوزیشن سے معیشت پر بات کرنے کیلئے تیار ہیں لیکنمقدمات ختم کرنے کا مطالبہ نہیں مانا جاسکتا ،اپوزیشن قیادت کو کوئی بھی ریلیف عدالتوں سے ہی ملے گا، اپوزیشن کو بڑا پن دکھانا ہے تو حکومت کے ساتھ بیٹھے اور متفقہ پالیسی تیار کی جائے۔عابد سلہری نے کہا کہ اپوزیشن کو سمجھنا ہوگا احتجا ج کرنے سے معیشت نہیں سدھر سکتی، حکومت کو اپوزیشن کا ساتھ چاہئے تو لچک کا مظاہرہ کرنا ہوگا،ن لیگ کو کریڈٹ جاتا ہے کہ اس نے توانائی کا بحران حل کردیا، آئی ایم ایف سے ڈیل پر پارلیمانی کمیٹی میں بات ہوسکتی ہے، پاکستان میں آئی ایم ایف اور ورلڈ بینک سے لوگوں کو لانے کی تاریخ موجود ہے۔محمد زبیرعمر نےکہا کہ میثاق معیشت کرنے کا وقت اب ختم ہوچکا ہے، حکومت نے معیشت کا بیڑہ غرق کر کے رکھ دیا ہے، ریاست مدینہ میں صرف سود تیزی سے بڑھ رہا ہے، حکومت میں اتنی اہلیت ہی نہیں ہے کہ ن لیگ ان کے ساتھ بیٹھے،وزیراعظم عمران خان پارلیمنٹ آتے نہیں ہم کس کے ساتھ بیٹھیں، جو شخص ہاتھ ملانے کو تیار نہیں اس کے ساتھ کس نکتہ پر ساتھ بیٹھیں، حکومت کے ساتھ بیٹھنے پر اپوزیشن کو بھی فرینڈلی ہونے کا الزام لگے گا۔محمد زبیر عمر نے کہا کہ ن لیگ پبلک سیکٹر اداروں کی نجکاری کی مخالفت نہیں کرے گی، پی ٹی آئی کو ماضی میں نجکاری کی مخالفت پر شرمندہ ضرور کریں گے، پی ٹی آئی نے اسٹیل مل اور پی آئی اے کی نجکاری کی ہر کوشش ناکام بنائی ،ان کا رویہ تو یہ تھا کہ انہوں نے ہمیں کسی کام میں کامیاب ہی نہیں ہونے دینا تھا، مڈل کلاس اور لوئر مڈل کلاس پر ٹیکسوں کے اضافے کی شدید مخالفت کریں گے، معیشت کی بہتری کیلئے حکومت کے ہر مثبت کام کی سپورٹ کریں گے، اگر یہ بجٹ میں اچھی چیزیں لاتے ہیں تو ہم حمایت کریں گے۔محمد زبیر عمر نے کہا کہ اسد عمر جب پبلک میں بتائیں گے کہ انہوں نے آئی ایم ایف کی شرائط ماننے سے انکار کیا تھا تو میں بھی واہ واہ کروں گا، ہمارا اختلاف اس بات پر ہے کہ اس دفعہ دونوں طرف آئی ایم ایف کی ٹیم بیٹھی ہے، گورنر اسٹیٹ بینک آئی ایم ایف کا بندہ لگادیا گیا ہے، ن لیگ نے پانچ سال میں گیارہ ٹریلین کے قرضے لیے تھے، پی ٹی آئی نے 3ہزار 700ٹریلین کے پہلے نو مہینے میں قرضے لے لیے، پی ٹی آئی پارلیمنٹ میں آتی ہی نہیں تھی کس کے پاس جاکر آئی ایم ایف ڈیل پر بات کرتے، ہماری حکومت ہوتی تو ہم بھی آئی ایم ایف کے پاس جاتے لیکن آئی ایم ایف کا نمائندہ لاکر نہیں بٹھادیں گے، حکومت میں آئے تو آئی ایم ایف نمائندوں کو نکال دیں گے۔

About clicknewslive

Check Also

: جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن کے آزادی مارچ میں افغان طالبان کے جھنڈے لانے والے کارکنان کو گرفتار کر لیا گیا ہے

اسلام آباد کلک رپورٹر سے جمعیت علمائے اسلام (ف) کے سربراہ مولانا فضل الرحمن کے …

Leave a Reply

کلک نیوز سے واٹس ایپ پر رابطہ کریں